کرپٹو کرنسی کیا ہے؟

کریپٹو کرنسی ایک ڈیجیٹل کرنسی ہے جس نے خود کو کرپٹوگرافی کے ذریعے محفوظ کیا ہے۔ کرپٹو کرنسیز زیادہ تر بلاک چین ٹیکنالوجی پر مبنی Decentralized Networks پر انحصار کرتی ہیں۔یہ ایک ایسا اثاثہ ہے جس کا تبادلہ بینکوں یا کسی قابل اعتماد تیسرے فریق کے بغیر (Peer to Peer)کیا جاتا ہے۔ کرپٹو کرنسی  کا کوئی فزیکل وجودنہیں ہے جیسے سکے یا نوٹ، ۔ یہ کسی مرکزی باڈی کے ذریعے ریگولیٹ نہیں ہوتے، اور ڈالر یا سونے سے انڈیکس نہیں ہوتے۔ یہ نئی الیکٹرونک کرنسیاں اپنے مختلف مالکان کے درمیان کرپٹو کی ملکیت کو منتقل کرنے کے لیے بلاک چین ٹیکنالوجی کا استعمال کرتی ہیں۔ لہٰذا یہ کرپٹو کرنسی صرف کچھ  نمبروں کی مجموعہ ہیں جن کی ملکیت ایک شخص سے دوسرے کو منتقل ہوتی ہے۔کرپٹو اور بلاک چین کی بدولت، اب انٹرنیٹ پراثاثو ں کی منتقلی ممکن ہے!

فرانسیسی حکومت کے مطابق کرپٹو کرنسی کوئی کرنسی ہی نہیں ہے کیونکہ تمام کرپٹو کرنسیز بہت زیادہ غیر مستحکم ہیں، اورتاجروں کو انہیں قبول کرنے پر مجبور نہیں کیا جا سکتا، اور انہیں اثاثہ نہیں سمجھا جاتا ۔ مگر آج کی دنیا میں کوئی بھی بات حتمی نہیں ہوتی۔ بے یقینی کی یہ دھند کبھی بھی چھٹ سکتی ہے۔  اور یہ سارا منظر نامہ بدل سکتا ہے۔

 2017 اور 2018 میں، کرپٹو کرنسیز   نے فنڈ ریزنگ کے لیے زبردست مقبولیت کے ساتھ ناقابل یقین تیزی کا مظاہرہ کیا ہے۔ کرپٹو میں فنڈز اکٹھا کرنےکے بعد انہیں دنیا میں کہیں بھی کسی بھی پروجیکٹ میں سرمایہ کاری کی جا سکتی ہے۔ فی الحال، کرپٹو کرنسی میں فنڈ ریزنگ کا رجحان کم ہوا ہے؛ تاہم، ان کی  مارکیٹ کیپٹلائزیشن، خاص طور پر بٹ کوائن، میں اضافہ جاری ہے۔ 26 دسمبر 2020 کو بٹ کوائن کی قدر میں $460 بلین سے زیادہ کا اضافہ ہوا۔ 2021 کے آغاز میں، ہم گردش میں موجود تمام بٹ کوائنز کے اثاثے ٹریلیارڈ (1000 بلین) ڈالر سے بھی تجاوز کر گئے ہیں۔

خصوصی فنڈز اور کمپنیوں کی بہت سی سرمایہ کاری کے ساتھ مالیاتی ادارے اس میں تیزی سے دلچسپی لے رہے ہیں۔ کچھ بڑے گروپس جیسے فیس بک،گوگل ایپل  اور ایمازون نے اپنی کرپٹوکرنسی  لیبرا (LIBRA)کو لانچ کرنے کی کوشش کی ہے، جس کا نام بدل کر Diem رکھا گیا ہے لیکن مختلف ممالک نے اس میں بہت کم دلچسپی دکھائی ۔ تبھی اُن کو کو اپنی کریپٹو کرنسیوں کے آپریشن کو تبدیل کرنا پڑا اور اپنی لانچ کو ملتوی کرنا پڑا۔

 کچھ معلوم یا گمنام ڈویلپرزان ڈیجیٹل اثاثوں کو تیار کرتے ہیں۔ وہ ان کی خصوصیات کا انتخاب کرتے ہیں: گردش میں ٹوکن یا سکے کی تعداد، لین دین کی رفتار، نیٹ ورک کی سیکیورٹی ۔ ان تمام کے متعلف مختلف قواعد وضع کئے جاتے ہیں۔۔ کچھ غیر معمولی حالات میں ان قواعد کو تبدیل کرنا ممکن ہے۔ ان تبدیلیوں کے نتیجے میں نئے کرپٹو کی تخلیق ہو سکتی ہے۔

نئے کرپٹو اثاثے تیار کرنے کے عمل کو کرپٹو مائننگ (Crypto Mining)کہتے ہیں۔ لوگ اپنے کمپیوٹر کو  اس مقصد کے لئے استعمال کرتے ہیں۔ اور کرپٹو نیٹ ورک کو محفوظ بنانے کے لئے  اپنے کمپیوٹر کی پروسیسنگ کو استعمال کرتے ہیں۔ اور بدلے میں انہیں مال فوائد حاصل ہوتے ہیں۔

Some Well Known Crypto Currencies: 

  1. Bitcoin
  2. Ethereum
  3. Tether
  4. Binance Coin
  5. XRP
  6. Cardano
  7. Dogecoin
  8. Litecoin
  9. Bitcoin Cash
  10. Solana

کچھ ممالک جیسے کہ ایل سلواڈور نے بٹ کوائن کو  اپنی قومی کرنسی بنا لیا ہے، چین اور کچھ دوسرے ممالک ابھی تذبذب کا شکار ہیں۔ اور بٹ کوائن کا تبادلہ کرنے والوں پر یا مائنگ کرنے و کے حوالے سے وقتاً فوقتاً مخصوص پابندیوں کا اعلان کرنا۔ اور  پاکستان، الجیریا، یا مراکش جیسے دیگر ممالک ان پر مکمل پابندی لگاتے ہیں۔

جب بھی نئی کرپٹو کرنسی بنائی جاتی ہے تو اُس کی بنیادی مقصدپچھلی کرنسیوں کے مسائل کو حل کرنا ہوتا ہے۔ مثال کے طور پر Litecoin  کا مقصد Bitcoin کے مقابلے میں تیزی سے رقم کی منتقلی کرنا ہے۔ ایتھریم سمارٹ معاہدوں یا Decentralized   ایپلی کیشنز کی ترقی میں مہارت رکھتا ہے۔ یا کرپٹو کرنسیوں کا ایک پورا گروپ جس کا مقصد بلاک چین پر فی سیکنڈ لین دین کی تعداد بڑھانا ہے۔

اگر آپ کرپٹو کرنسی حاصل کرنا، ذخیرہ کرنا  یا مائن کرنا چاہتے ہیں۔ تو آپ کو کرپٹو کرنسی کے بنیادی  تصورات اور عوامل کو سمجھنا از حد ضروری ہے۔  اس بلاگ سیریز میں ہم کرپٹو کرنسی کے بنیادی تصورات کو زیر بحث لائیں گے پہلے ان تصورات اور عوامل کو اچھے طرح سمجھیں اور پھر کوئی فیصلہ کریں۔

نتیجہ

 اچھی طرح تحقیق کئے بغیر کرپٹو کرنسی میں سرمایہ کاری کرنا خطرے سے خالی نہیں۔ اگر آپ ان کے کام کرنے کے طریقے سے لے کر ان کے فوائد اور کرپٹو کرنسیوں کی قیمت کو متاثر کرنے والے ضروری عوامل تکاور انہیں با حفاظت حاصل کرنے یا بیچنے کے طریقہ کار کو نہین جانتے  تو کوئی معجزہ ہے آپ کی سرمایہ کاری کو بچا سکتا ہے۔ اور آج کے دور میں معجزات نہیں ہوا کرتے۔ یاد رکھیے گا۔

You May Also Like to Read:

Leave a Comment