بھیڑ میں اک اجنبی کا سامنا اچھا لگا

بھیڑ میں اک اجنبی کا سامنا اچھا لگا
سب سے چھپ کر وہ کسی کا دیکھنا اچھا لگا
سرمئی آنکھوں کے نیچے پھول سے کھلنے لگے
کہتے کہتے کچھ کسی کا سوچنا اچھا لگا
بات تو کچھ بھی نہیں تھی لیکن اس کا ایک دم
ہاتھ کو ہونٹوں پہ رکھ کر روکنا اچھا لگا
چائے میں چینی ملانا اس گھڑی بھایا بہت
زیر لب وہ مسکراتا شکریہ اچھا لگا
دل میں کتنے عہد باندھے تھے بھلانے کے اسے
وہ ملا تو سب ارادے توڑنا اچھا لگا
بے ارادہ لمس کی وہ سنسنی پیاری لگی
کم توجہ آنکھ کا وہ دیکھنا اچھا لگا
نیم شب کی خاموشی میں بھیگتی سڑکوں پہ کل
تیری یادوں کے جلو میں گھومنا اچھا لگا
اس عدوئے جاں کو امجدؔ میں برا کیسے کہوں
جب بھی آیا سامنے وہ بے وفا اچھا لگا

امجد اسلام امجد

 

Please Share On

Facebook
Twitter
Pinterest
WhatsApp

مزید پڑھیے

Famous Urdu Poets

allama-iqbal

علامہ اقبال

Mirza Ghalib

مرزا غالب

Amjad Islam Amjad

امجد اسلام امجد

Ali Zaryoun

علی زریون

parveen shakir

پروین شاکر

Wasi_Shah

وصی شاہ

faiz ahmad faiz

امجد اسلام امجد

Leave a Comment